اے اِمامُ الہدیٰ محب رسول

قصیدہ مدحیہ درشان افضل العلما اکمل الکملابقیۃ السلف حجۃ الخلف تاج الفحول محب رسول حضرت مولیٰنا مولوی حافظ حاجی محمد عبدالقادر صاحب قادری عثمانی بدایونی رحمۃ اللّٰہ تعالٰی علیہ مسمّی باسم تاریخی
چراغ انس
۱۳۱۵ھ

اے اِمامُ الہدیٰ محب رسول

اے اِمامُ الہدیٰ محب رسول
دین کے مقتدا محب رسول
نائب مصطفٰے محب رسول
صاحب اصطفا محب رسول
خادِمِ مرتضیٰ محب رسول
مظہر اِرتضا محب رسول
عین حق کا بنا محب رسول
عین حق کا بنا محب رسول
زُبدۃُ الاتقیا محب رسول
عُمْدَۃُ الازکیا محب رسول
غربا پر فدا محب رسول
اُمرا سے جدا محب رسول
اے سَلَف اِقتدا محب رسول
اے خَلَف پیشوا محب رسول
سقم دل کی شفا محب رسول
چشم دین کی صفا محب رسول
شرقِ شانِ وَفا محب رسول
برقِ جانِ جفا محب رسول
اے کرم کی گھٹا محب رسول
اپنی بارش بڑھا محب رسول
کیوں     نہ ہو چاند سا محب رسول
نور کا جَبْہَہ۱؎ سا محب رسول
حرمین و حمی میں     بس کے گیا
نَجَف و کربلا محب رسول
تو کلامِ خدا کا حافِظ ہے
تیرا حافِظ خدا محب رسول
عبد قادِر نہ کیوں     ہو نام کہ ہے
ظل غوثُ الوریٰ محب رسول
مشعل راہِ دین و سنت ہے
تیرے رُخ کی ضیا محب رسول
اچھے۱؎ پیارے کی خانہ زادی ہے
اچھا پیارا بنا محب رسول
شرم والے غنی۲؎ کا بیٹا ہے
کانِ جود و حیا محب رسول
آج قائم ہے دَم قدم سے ترے
دین حق کی بنا محب رسول
ٹھیک معیار سنیّت ہے آج
تیری حب و وِلا محب رسول
سنیت سے پھرا ہدی سے پھرا
اب جو تجھ سے پھرا محب رسول
مصطفی کا ہوا خدا کا ہوا
اب جو تیرا ہوا محب رسول
مُذنب بد مذاق را زہر ست
شہد صافِ شما محب رسول
عاصی رُوسیاہ دشمن تست
رنگ رُو شد گوا محب رسول
خار۱؎زَاروں     کے واسطے ہے سموم
گلبنوں    ۲؎ کو صبا محب رسول
ہدم بنیان نجد کا طرہ
تیرے سر پر سجا محب رسول
ہزم اَحزابِ ندوہ کا سہرا
تیرے ماتھے رہا محب رسول
رَفض و تفضیل و نجدیت کا گلا
تیرے ہاتھوں     کٹا محب رسول
تو نے اَبنائے بد مذاقی کو
پے پدر کر دیا محب رسول
ماتمی ہیں     زَنانِ نجد کہ ہائے
بیوہ تو نے کیا محب رسول
جلتے ہیں     ندویہ کہ صدر کی قدر
سرد کی تو نے یا محب رسول
سر مُنڈاتے ہی پڑگئے اَولے
تجھ سے پالا پڑا محب رسول
بخت کھل جاتا تخت مل جاتا
تو نے بندی رکھا محب رسول
مَکَرُوْا     مَکْرَ ھُمْ     و     عند      اللّٰہ
مَکْرُھُمْ     و     الجَزا     محب    رسول
کوہ اَفگن تھا ان کا مکر مگر
مکر۱؎ حق تھا بڑا محب رسول
پہلے بھی مَکْرْدَارِ ندوَہ کو
حق نے دی تھی سزا محب رسول
بعد تیرہ صدی کے پھر اُچھلا
اب وہ تجھ سے دَبا محب رسول
اُن کی جو رُوئداد تھی کر دی
تو نے دَم میں     ہبا محب رسول
زَر کے مفتی۲؎ بنا کریں     مخطی
تو ہے مفتی بجا محب رسول
ناظمِ فتنہ لاکھ ہوں     تو ہے
ناظمِ اِہتدا محب رسول
جھوٹے حقانی بنتے ہیں     گمراہ
سچے حقانی آ محب رسول
کچھ مداہن حمیر میر بنے
میر ان کو سنا محب رسول
یوں     نہ سمجھیں     تو سر اڑایا آپ
تو دل اُن کا اُڑا محب رسول
ندوِی جھنجھلاتے ہیں     کہ وہی تو ہیں
اَسد اَحْمد رَضا محب رسول
غافل اس سے کہ ایک سُنی ہے
فوجِ حق میں     ہوں     یا محب رسول
گلۂ بز کو ایک شیر بہت
وہ    بھی     لا    سِیَّما     محب   رسول
ہم بجامع رَمَہ رَمَد اَز شیر
لطف دِہ جمعہ رَا محب رسول
میرے ستر70 سوال کا قرضہ
نہ ادا ہو سکا محب رسول
نہ ادا ہو اگرچہ محشر تک
ڈھیل اُونھیں     دے قضا محب رسول
بیسوں     اعلانوں     پر بھی ہٹ نہ سکا
گھونگٹ ان مکھڑوں     کا محب رسول
شرمِ نو خاستن رہی حائل
ندوے کو حسرتا محب رسول
حال     مُسْتَنْفِرَہ     کا      قَسْوَرہ    سے
سب نے دیکھا سنا محب رسول
میرے خنجر کی تاب لا نہ سکے
خاک پہنچیں     گے تا محب رسول
گالیاں     دیں     جواب کے بدلے
ذَا       ہَنِیًّا       لَّنَا       محب     رسول
شعلہ خویوں     کو چھیڑ کر سننا
یاں     ہے اس کا مزا محب رسول
تلخ زیْبَد لب شَکَرِخا رَا
خواجہ فرما چکا محب رسول
ہاں     نہ ان دو کا تیسرا دیکھا
آنکھیں     کھلتیں     ذرا محب رسول
تیسرا کون عونِ حق جس کا
میں     فقیر اور گدا محب رسول
تیسرا کون بدرِ حق جس کا
شرق میں     اور سما محب رسول
تیسرا کون مہرِ حق جس کا
نقطہ میں     منطقہ محب رسول
سایہ ان دو پہ کیسے دو کا ہے
جن کا ثالث خدا محب رسول
ثَانِیَ    اثْنَیْنِ     اِذْ     ھُمَا     فِی     الْغَار
میں     نثار اور فدا محب رسول
بلکہ دو اَحولی سے کہتے ہیں
میں     ہوں     تجھ میں     فنا محب رسول
نہ تو مجھ سے جدا نہ میں     تجھ سے
میں     ترا تو مرا محب رسول
غلطی کی ترا مرا کیسا!
تو من و من تو یا محب رسول
یہ بھی تیرے کام سے ہے ورنہ
من کجا ؤ کجا محب رسول
میں      کہاں       اور  کہاں   تَعَالَی   ا   للّٰہ
تری مَدْح و ثناء محب رسول
تیری نعمت کا شکر کیا کیجئے
تجھ سے کیا کیا مِلا محب رسول
اور تو اور شیخ تجھ سے ملا
اس سے بڑھ کر ہے کیا محب رسول
شیخ بھی وہ کہ جس کے دَر کی خاک
چشمِ جاں     کی جلا محب رسول
شیخ بھی وہ کہ ایک جھلک میں    کرے
شب کو شَمْس الضُّحا محب رسول
شیخ بھی وہ کہ جس کی ایک نگاہ
دو جہاں     کا بھلا محب رسول
شیخ بھی وہ کہ جس کے مجرائی
اَولیاء اَصفیا محب رسول
شیخ بھی وہ کہ فتنوں     کی ہے قضا
جس کی ایک ایک اَدا محب رسول
شیخ بھی وہ کہ جس کے نام کا وِرد
دردِ دِل کی دوا محب رسول
شیخ بھی وہ جس کے عشق کی آگ
نار سے ہے نجا محب رسول
شیخ بھی وہ کہ حق کے پھول کھلائے
جس کے دَم کی ہوا محب رسول
شیخ بھی وہ کہ جس کا آبِ وُضو
باغ دین کی بہا محب رسول
شیخ بھی وہ کہ خاکِ پا سے کرے
مس جان کو طلا محب رسول
شیخ بھی کون حضرتِ آلِ رسول
خاتم الاولیاء محب رسول
اس کے در تک رسائی تجھ سے ملی
تو ہوا رہنما محب رسول
مجھ پہ واجب ہے تیرا شکر نعم
مجھ پہ لازم دعا محب رسول
جگمگاتے چراغ سنت کے
تا اَبد جگمگا محب رسول
نہ کبھی بادِ حادثہ پاس آئے
نہ کبھی جھلملا محب رسول
دائما تیری نسل روشن میں
شمع ہو شمع زا محب رسول
رہے     تا     روزِ     نُورُھُمْ     یَسْعٰی
روز اَفزوں     ضیا محب رسول
مقتدر تیرے نوبروں     کو کرے
تجھ سے بھی کچھ سوا محب رسول
تیرے سایہ میں     لہلائیں     کھلیں
تیرے گُل گُلُبنا محب رسول
مورثِ مجد و فضل آبا ہو
وارثُ الانبیاء محب رسول
خار دَر چشم و خوار دَر چشماں
دشمنت دائما محب رسول
تجھ پہ فضل رسول کا سایہ
مجھ پہ سایہ ترا محب رسول
میرا شافع حضورِ غوث میں     ہو
مَدْح کا دے صلا محب رسول
مُدَّعی سے مجھے بچا لیں     غوث
دل کا دیں     مُدَّعا محب رسول
میرے سب کام ان سے بنوا دے
ظاہراً باطناً محب رسول
مجھے کر دے رضائے اَحْمد وہ
جس نے تجھ کو کیا محب رسول
آہ  صد  آہ  میں      ہوں       بِئْسَ  الْعَبْد
مَدد    اے    حَبَّذَا     محب    رسول
بِئْسَ  کو    نِعْمَ   سے    بدلوا    دے
اپنے مولا سے یا محب رسول
کون مولا وہ سید الافراد
غوثِ ہر دوسرا محب رسول
میں     بھی دیکھوں     جو تو نے دیکھا ہے
روزِ سعی صفا محب رسول
ہاں     یہ سچ ہے کہ یاں     وہ آنکھ کہاں
آنکھ پہلے دِلا محب رسول
تینوں     بھائی نہ کوئی غم دیکھیں
عشق شہ کے سوا محب رسول
میرے بیٹوں     بھتیجوں     کو بھی ہو
علم نافع عطا محب رسول
دین و دنیا کی عزتیں     پائیں
رَد رہے ہر بلا محب رسول
خاتمہ سب کا دین حق پہ کرے
کلمہ طیبہ محب رسول
خلد میں     زیر ظل غوثِ کریم
رہیں     یک جا رضا محب رسول
٭٭٭