تاجدارِ حرم اے شہنشاہِ دیں

تاجدارِ حرم اے شہنشاہِ دیں
تُم پہ ہر دم کروڑوں درود و سلام
ہو نگاہِ کرم ہم پہ سلطانِ دیں
تُم پہ ہر دم کروڑوں درود و سلام
دور رہ کر نہ دم ٹُوٹ جائے کہیں
کاش طیبہ میں اے میرے ماہِ مُبیں
دفن ہونے کو مِل جائے دو گز زمیں
تُم پہ ہر دم کروڑوں درود و سلام
تاجدارِ حرم اے شہنشاہِ دیں
تُم پہ ہر دم کروڑوں درود و سلام
کوئی حُسنِ عمل پاس میرے نہیں
پَھس نہ جا وں قیامت میں مولا کہیں
اے شفیعِ اُمم لاج رکھنا تُمہی
تُم پہ ہر دم کروڑوں درود و سلام
تاجدارِ حرم اے شہنشاہِ دیں
تُم پہ ہر دم کروڑوں درود و سلام

کوئی حُسنِ عمل پاس میرے نہیں

پَھس نہ جا وں قیامت میں مولا کہیں
اے شفیعِ اُمم لاج رکھنا تُمہی
تُم پہ ہر دم کروڑوں درود و سلام​

ہو نگاہِ کرم ہم پہ سلطانِ دیں
تُم پہ ہر دم کروڑوں درود و سلام
پِھر بُلا لو مدینے میں عطار کو
یہ تڑپتا ہے طیبہ کے دیدار کو
کوئی اس کے سوا آرزو ہی نہیں
تُم پہ ہر دم کروڑوں درود و سلام
تاجدارِ حرم اے شہنشاہِ دیں
تُم پہ ہر دم کروڑوں درود و سلام
ہو نگاہِ کرم ہم پہ سلطانِ دیں
تُم پہ ہر دم کروڑوں درود و سلام​
الیاس عطار قادری