تجھے تسکینِ دل پایا، تجھے آرامِ جاں پایا

مولانا محمد علی جوہرؔ

تجھے تسکینِ دل پایا، تجھے آرامِ جاں پایا
نہاں بھی ہے تو کیا تجھ کو جہاں ڈھونڈا وہاں پایا

کوئی نا مہرباں ہو کر ہمارا کیا بگاڑے گا
کرم تیرا تو ہے ہم پر تجھے تو مہرباں پایا

ترا وہ مبتلا ناکام سمجھا جس کو دنیا نے
اسی کو سرخرو دیکھا اسی کو کامراں پایا

حرم میں تھا ہر اک کو یوں تو تیرے عشق کا دعویٰ
جو کی تحقیق تو اکثر وہی عشقِ بتاں پایا

کسی کو ڈھونڈتا دیکھو خود اپنے گوشۂ دل میں
تو بس سمجھو کہ اب اس نے سراغِ لا مکاں پایا

رہا آوارۂ دیر و حرم پہلو سے بیگانہ
دل اس کا عرش و کرسی ہے کہاں ڈھونڈا کہاں پایا

جہاں ایماں ہو واں کیسے گزر ہو یاس و حرماں کا
کسی مومن کو بھی اے دل خدا سے بد گماں پایا

نہیں معلوم کیا ہو حشر جوہرؔ کا پر اتنا ہے
کہ ہاں نامِ محمدؐ مرتے دم وردِ زباں پایا