تجھے ڈھونڈتا تھا میں چار سو، تری شان جل جلالہٗ

ؔاکبر وارثیؔ

تجھے ڈھونڈتا تھا میں چار سو، تری شان جل جلالہٗ
تو ملا قریبِ رگِ گلو، تری شان جل جلالہٗ

تری یاد میں ہے کلی کلی، ہے چمن چمن میں ھو العلی
تو بسا ہے پھول میں ہو بہو، تری شان جل جلالہٗ

گرے قطرے ابر سے خاک پر تو یہ بولا سبزہ اٹھا کے سر
دیا غیب سے مجھے آب جو، تری شان جل جلالہٗ

تری آب لعل و گہر میں ہے، ترا نور شمس و قمر میں ہے
تری شان عم نوالہٗ، تری شان جل جلالہٗ

ترے حکم سے جو ہوا چلی تو چٹک کے بولی کلی کلی
ہے کریم تو ہے رحیم تو، تری شان جل جلالہٗ

ترا جلوہ دونوں جہاں میں ہے ، ترا نور کون و مکاں میں ہے
یہاں تو ہی تو وہاں تو ہی تو، تری شان جل جلالہٗ

ہے دعائے اکبرِؔ ناتواں نہ تھمے قلم نہ رکے زباں
میں لکھوں پڑھوں یہی با وضو، تری شان جل جلالہٗ