ترا ہی بحر، سفینہ رواں بھی تیرا ہے بھنور بھی تیرے ہیں اور بادباں بھی تیرا ہے

مظہرؔ امام

ترا ہی بحر، سفینہ رواں بھی تیرا ہے
بھنور بھی تیرے ہیں اور بادباں بھی تیرا ہے

تو ہی بتا کہ تری بزم میں کہاں ہے جگہ
چراغ بھی ہیں ترے اور دھواں بھی تیرا ہے

مججھے تو نذر بھی کرنے کو کچھ نہیں اپنا
جبیں کی خاک تری آستاں بھی تیرا ہے

ہمارے نام ہے لوح و قلم کا بارِ گراں
کہ گردشیں بھی تری آسماں بھی تیرا ہے

بس اک کشاکشِ بے نام اور میں بے بس
نتیجہ بھی ہے ترا امتحاں بھی تیرا ہے

میں تھک کے بیٹھ رہو ں یا قدم بڑھا کے چلوں
فنا بھی تیری ہے نام و نشاں بھی تیرا ہے