تری تعریف کیا ہو اس زباں سے کہ تو ہے ماورا سارے جہاں سے

منظورالحسن منظور

تری تعریف کیا ہو اس زباں سے
کہ تو ہے ماورا سارے جہاں سے

مرے الفاظ قاصر ہیں بیاں سے
پرے ہے تو مرے وہم و گماں سے

مقام کبریا اب تک نہ پایا!
بہت پوچھا زمیں و آسماں سے

تری ہستی مکاں سے لامکاں تک
میں ناواقف ہوں خود اپنے مکاں سے

رگ جاں سے ہے تو نزدیک لیکن
بہت ہے دور تخیل و بیاں سے

سمجھتا ہوں میں اس قطرے کو دریا
ملا جو تیرے بحر بیکراں سے

چلا آیا در کعبہ پہ عاشق
بچھڑ کر عقل و دل کے کارواں سے

ہراک دھڑکن ہے دل کی ذکر تیرا
تری حمدوثنا کیا ہو زباں سے

نہیں منظورؔ کو اپنا ہی عرفاں
تلاش رب میں نکلا ہے مکاں سے