تری ثنا کے لیے میں زباں کہاں سے لاؤں میں بے بساط ہوں حسن بیاں کہاں سے لاؤں

تری ثنا کے لیے میں زباں کہاں سے لاؤں
میںبے بساط ہوں حسن بیاں کہاں سے لاؤں
تری جلالتیں لکھ پاؤں کیسے ممکن ہے
ثنا کی میں صفت بیکراں کہاں سے لاؤں
جو کرسکے ترے اوصاف پاک کی توضیح
حروف مدح کی وہ کہکشاں کہاں سے لاؤں
ترے کرم کی کوئی حد نہ ہے حساب کوئی
کریم تجھ سا بتا مہرباں کہاں سے لاؤں
ہوں ایک بندۂ قاصر میں رب سے کیسے کہوں
اے حال زار ترا ترجماں کہاں سے لاؤں
عطا میں رحمت عالم، سخا میں ایک شفیع
رسول جیسا اے رب جہاں کہاں سے لاؤں
وہ مہربان ہے بندوں پہ ہر نفس ابرارؔ
میں لم یزل سا کوئی حکمراں کہاں سے لاؤں
(از ’’قسام ازل‘‘)
ژ