تری ذات ذاتِ صفات ہے ترے دم سے نظم حیات ہے تری حمد سب کی نجات ہے

ابراہیم اشکؔ

تری ذات ذاتِ صفات ہے ترے دم سے نظم حیات ہے تری حمد سب کی نجات ہے
ترا ذکرکرنہ سکے زباں تری فکر کرنہ سکے جہاں تری عظمتوں میں وہ بات ہے
٭٭٭
مرا سجدہ ہے تری بندگی تری بندگی مری زندگی کہ یہ زندگی ہے کمال کی
مری سانس ہے ترا نام ہے مری آس ہے ترا جام ہے یہی جامِ قندو نبات ہے
٭٭٭
ترے نور کا جو ظہور ہے کہ جہاں پہ گم یہ شعور ہے جو نہ دیکھے اس کا قصور ہے
تو حدود عقل سے دور ہے ترا جس کسی کو سرور ہے اسے رنج وغم سے نجات ہے
٭٭٭
تو رحیم ہے تو کریم ہے ترے دم سے باد نسیم ہے تری ذات سب سے عظیم ہے
ترے حکم سے ہے یہ بحروبر ہے ہرایک شے میں ترا ہنر کہ ترے ہی فن کو ثبات ہے
٭٭٭
تری شان جل جلا لہ‘ ترا حرف حرف کمالہ‘ سرِ عرش و فرش ہے تو ہی تو
ہے صدا صدا تری گفتگو ہے ادا ادا تری جستجو ترا حسن سب کے ہی ساتھ ہے