ترے خیال سے ہے شوق میں نمو اللہ!

ترے خیال سے ہے شوق میں نمو اللہ!
ترے جمال سے ہے فکر سرخ رو اللہ!
ہے تیری دین ریاض سخن کی شادابی
تری عطا سے ہے سر سبز گفتگو اللہ!
ہے عقل دنگ کہ تشبیہ تجھ کو دے کس سے
نہیں ہے چیز کوئی تجھ سی ہو بہو اللہ!
رہا نہ عارفِ حق کوئی خانقاہوں میں
تہی ہے میکدۂ شوق میں سبو اللہ!
ہے عضو عضو بدن اشکِ انفعال سے تر
نگاہ نیچی کمر خم ہے سرفرو اللہ!
ہے تیرے ذکر میں مشغول کائنات تمام
تراہی شہرہ ہے ہر سمت کوبکو اللہ!
ہے واقفِ ادبِ حمد خامۂ ناوکؔ
لکھا ہے اس نے ترا نام باوضو اللہ!

ناوکؔ حمزہ پوری بہار