تو خدا ہے خدا‘ تو کہاں‘ میں کہاں میں ہوں بندہ ترا‘ تو کہاں میں کہاں

فراغؔ روہوی

تو خدا ہے خدا‘ تو کہاں‘ میں کہاں
میں ہوں بندہ ترا‘ تو کہاں میں کہاں
تو ہی معبود ہے‘ تو ہی مسجود ہے
میں ہوں وقفِ ثنا تو کہاں‘ میں کہاں
نور ہی نور ہے ذات باری تری
خاک سے میں بنا تو کہاں میں کہاں
کیا حقیقت مری‘ میں فنا ہی فنا
تو بقا ہی بقا‘ تو کہاں میں کہاں
خالق و خلق کے بیچ موجود ہے
اک بڑا فاصلہ تو کہاں میں کہاں
ترے اوصاف کا کب احاطہ ہوا
تو گماں سے سوا‘ تو کہاں میں کہاں
تو مخاطب ہے شام و سحر‘ اور میں
بے زباں‘ بے نوا‘ تو کہاں میں کہاں
میری اوقات کیا ہے نبیؐ بھی مرا
نام لیوا ترا‘ تو کہاں میں کہاں
کیا ملائک ترے‘ کیا فراغِ حزیں
سب کی ہے یہ صدا تو کہاں میں کہا