تو ہے خلاق دو جہاں یارب تیری رحمت ہے بے کراں یارب ذرہ ذرہ فنا بداماں ہے

بیتاب کیفی

تو ہے خلاق دو جہاں یارب
تیری رحمت ہے بے کراں یارب

ذرہ ذرہ فنا بداماں ہے
ایک تو ہی ہے جاوداں یارب

پھول خوشبو بہار رعنائی
تیری عظمت کے ہیں نشاں یارب

سب ہیں سیم و رجا میں سرگرداں
مرغ و ماہی و انس و جاں یارب

حسن تیرا تمام بکھرا ہے
یہ زمیں ہو کہ آسماں یارب

بخشش و مغفرت کے ساماں سے
عقل حیراں ہے چپ زباں یارب

ساری دنیا میں فیض جاری ہے
بحر الطاف ہے رواں یارب

آج تک اس جہان فانی میں
راز سمجھا کوئی کہاں یارب

سن لے بیتابؔ دل کی آوازیں
ہو عطا ندرت بیاں یارب