تیری آرزو مری زندگی، مری بندگی تری جستجو

رزاق افسرؔ

تیری آرزو مری زندگی، مری بندگی تری جستجو
یہ ہے روزوشب مرا مشغلہ، مرے سلسلے یہی کوبکو

تری ذات منبع نور ہے، ترا نور کل کا ظہورہے
تو مجیب اسودوطور ہے، تونہاں کہیں کہیں روبر و

کوئی ایسا دیدہ ودل کہاں،تری ذات جس پہ نہ ہوعیاں
تو قدیم و خالق کن فکاں،تومحیط عالم رنگ وبو

تری راہ صبح کے رابطے ترے، فاصلے مرے رت جگے
یہ نیاز و ناز کے مرحلے، کہیں تشنہ لب کہیں آبجو

تری عظمتوں کے سرورسے ہوئی فکر میری نہال جب
تو ملا کمال سخن مجھے، بنی آئینہ مری گفتگو

ہو بیان کیا تری برتری، ترا نام جب بھی لیا کوئی
تو زبان خلق ہے کہہ اٹھی،تری شان جل جلالہ‘