حسنِ ازل، خدائے جہاں، رب کائنات عاجز زباں ہے، کیسے بیاں ہوں تری صفات

آصف رضا رضوی (کراچی)

حسنِ ازل، خدائے جہاں، رب کائنات
عاجز زباں ہے، کیسے بیاں ہوں تری صفات

ہر اک نفس کی آمد و شد پر تری نظر
ہے دل کی دھڑکنوں میں مچلتی ہوئی حیات

ہر گل ترے وجود کی خوشبو لئے ہوئے
ہر شے میں جلوہ ریز ہیں تیری تجلیات

چاہے تو ایک بوند بنے، بحر بے کنار
کہہ دے تو لفظ کن سے ہو تخلیق شش جہات

معصوم انبیاء ہوں کہ ہم سے خطا شعار
محتاج تیرے لطف و کرم کی ہر ایک ذات

تیرے کلام پاک کی آیات میں نہاں
گوشے بسیط فکر کے، اور سیکڑوں نکات

تو نے اتاریں آیتیں قلبِ رسولؐ پر
جو بات تھی تری، وہ ترے مصطفی کی بات