خالق ارض و سما اے میرے رب ذوالجلال تجھ سے پوشیدہ نہیں ہرگز کسی کے دل کا حال

عارف صدیقی (کراچی)

خالق ارض و سما اے میرے رب ذوالجلال
تجھ سے پوشیدہ نہیں ہرگز کسی کے دل کا حال

ہر جگہ ہر رنگ میں موجود ہے تیرا وجود
تو وہاں بھی ہے جہاں پہنچے نہیں وہم و خیال

گو جہاں کے اس چمن میں تو نظر آتا نہیں
برگ و گل غنچوں سے ظاہر ہے ترا حسن وجمال

تیری صناعی ہے فہم و عقل سے بھی ماورا
تیری یکتائی ہے مولا بے نظیر و بے مثال

گر عطا تیری نہ ہو ہم سب تہی دامن رہیں،
گر کرم تیرا نہ ہو یہ زندگی اپنی وبال

تابع فرماں ترے ہیں سب نجوم و مہر ماہ
گر نہ ہو تیری رضا پتوں کا بھی ہلنا محال

تیرے الطاف و کرم پر ہر کسی کی ہے نظر
دور کرتا ہے تو عارفؔ کے بھی سب رنج و ملال