خدایا ہاتھ اٹھائوں عرضِ مطلب سے بھلا کیوں کر کہ ہے دستِ دعا میں گوشۂ داماں اجابت کا

حکیم مومن خاں مومنؔ

خدایا ہاتھ اٹھائوں عرضِ مطلب سے بھلا کیوں کر
کہ ہے دستِ دعا میں گوشۂ داماں اجابت کا

عنایت کر مجھے آشوب گاہِ حشرِ غم اک دل
کہ جس کا ہر نفس ہم نغمۂ شورِ قیامت کا

فروغِ جلوۂ توحید کو وہ برقِ جولاں کر
کہ خرمن پھونک دیوے ہستی اہلِ ضلالت کا

مرا جوہر ہو سرتاپا صفائے مہرِ پیغمبر
مرا حیرت زدہ دل آئینہ خانہ ہو سنت کا

مجھے وہ تیغِ جوہر کر کہ میرے نام سے خوں ہو
دل صدپارہ اصحاب نفاق و اہل بدعت کا

خدایا لشکرِ اسلام تک پہنچا کہ آپہنچا
لبوں پر دم بلا سے جوشِ خوں شوقِ شہادت کا