خدا وند قدوس اے کردگار ذرا سن لے ہم بیکسوں کی پکار

سکندر عرفانؔ

خدا وند قدوس اے کردگار
ذرا سن لے ہم بیکسوں کی پکار
تو ستار غفار جبار ہے
تری ذات سے جگ کی رفتار ہے
تجھی سے ہے وابستہ یہ کائنات
ترے حکم سے ہے نظامِ حیات
ترا حسن ذرّے سے بھی ہے عیاں
ترا جلوہ خورشید میں بھی نہاں
تری رحمتوں کا نہیں کچھ حساب
جہاں میں نہیں تیرا کوئی جواب
ترے ہاتھ ہے موت اور زندگی
ہے لازم سبھی کو تری بندگی
خطا کار عرفان پر کر کرم
تو اس کے گناہوں کا رکھ لے بھرم