درد سے میرا دامن بھر دے، یا اللہ! ٭ قتیلؔ شفائی

درد سے میرا دامن بھر دے، یا اللہ!
پھر چاہے دیوانہ کر دے، یا اللہ!

میں نے تجھ سے چاند ستارے کب مانگے
روشن دل، بیدار نظر دے، یا اللہ!

میرے کاندھے جس کو اپنا جان سکیں
مجھ کو سوچنے والا سر دے، یا اللہ!

دھوپ میں چلنے والے موم کے لشکر کو
کوئی سایہ دار شجر دے، یا اللہ!

سورج سی اک چیز تو ہم سب دیکھ چکے
سچ مچ کی اب کوئی سحر دے، یا اللہ!

دم گھٹتا ہے اپنا تنگ جزیروں میں
کوئی لا محدود نگر دے، یا اللہ!

سینہ تان کے چلتا رہنے دے مجھ کو
دینا ہے تو اپنا ڈر دے، یا اللہ!

یا دھرتی کے زخموں پر مرہم رکھ دے
یا میرا دل پتھر کر دے، یا اللہ!

٭٭٭
قتیلؔ شفائی​