زباں تیری فلک تیرا ہراک کو جستجو تیری مکیں و لامکاں تیرا گلوں میں رنگ و بو تیری

اخترؔبیکانیری

زباں تیری فلک تیرا ہراک کو جستجو تیری
مکیں و لامکاں تیرا گلوں میں رنگ و بو تیری

عیاں ہے ذ رے ذرے سے تری شان کریمانہ
غرض کہ حد امکاں تک ہے مدحت چار سو تیری

نہیں موقوف رسم بندگی دنیا میں انساں پر
چرندوں اور پرندوں کی زباں پر گفتگو تیری

جگادیتی ہے بانگ مرغ شب میں سونے والوں کو
ادا کرتے ہیں برگ و گل عبادت با وضو تیری

دھلادیتی ہے منھ غنچوں کا شبنم صبح دم آکر
رواں گلشن میں ہوتی ہے صدائے حق و ہو تیری

ہراک دل میں نہاں ہے اور ہے نظروں میں پوشیدہ
پھرا دونوں جہاں میں لے کے اختر ؔ آرزو تیری