زباں جومدح میں کھولی سخن سخن مہکا

زباں جومدح میں کھولی سخن سخن
مہکا
بفیض نام محمد مرادہن مہکا
خوشاکہ رحمت کل کاجوپیرہن
مہکا
توعطر بیزہوئی فکر اورفن
مہکا
بساطِ شعر میں سیرت کے گل
مہک اٹھے
دیارِنعت میں آقاکابانکپن
مہکا
مہک مہک اٹھے کتنے صحابۂ
ذیشان
کچھ اس ادا سے وہ آقائے
گلبدن مہکا
اشارہ رفعت شہ کاملاجو ’’
نشرح‘‘سے
جہاں میں نعت کادریائے موجزن
مہکا
گئے زمین سے تاعرش جب شہ
والا
ہوئے ستارے قدم بوس اور گگن
مہکا
حرم میں عظمت توحید کے گلاب
مہکے
بفضل رب علیٰ دست بت شکن
مہکا
نبی کانام معطرشریں ہے اے
ابرارؔ
کراس کاورد خیالوں کی انجم
مہکا
 
ابرارؔکرتپوری