سیّد کونین سلطانِ جہاں

غزل دَرصنعت عزل الشفتین کہ درو ہر دولب ملاقی نمی شود
اس نعت شریف میں     یہ صنعت رکھی ہے کہ پڑھنے میں     دونوں     ہونٹ نہیں     ملتے

سیّد کونین سلطانِ جہاں

سیّد کونین سلطانِ جہاں
ظلِ یزداں     شاہِ دیں     عرش آستاں
کُل سے اَعلیٰ کُل سے اَوْلیٰ کُل کی جاں
کُل کے آقا کُل کے ہادی کُل کی شاں
دلکشا دلکش دِل آرا دلستاں
کانِ جان و جانِ جان و شانِ شاں
ہر حکایت ہر کنایت ہر اَدا
ہر اِشارت دِل نشین و دلنشاں
دل دے دل کو جان جاں     کو نور دے
اے جہانِ جان والے جانِ جہاں
آنکھ دے اور آنکھ کو دِیدارِ نور
رُوح دے اور رُوح کو راحِ جناں
ا   للّٰہ   ا   للّٰہ   یاس   اور   ایسی   آس   سے
اور یہ حضرت یہ دَر یہ آستاں
تو ثنا کو ہے ثنا تیرے لئے
ہے ثنا تیری ہی دِیگر دَاستاں
تو نہ تھا تو کچھ نہ تھا گر تو نہ ہو
کچھ نہ ہو تو ہی تو ہے جانِ جہاں
تو ہو داتا اور اَوروں     سے رَجَا
تو ہو آقا اور یادِ دِیگراں
اِلتجا اس شرک و شر سے دور رکھ
ہو رضا تیرا ہی غیر اَز اِین و آں
جس طرح ہونٹ اِس غزل سے دور ہیں
دل سے یوں     ہی دور ہو ہر ظن و ظاں
٭٭٭