صدق و صفات بخش تصور خودی کا دے پرودگار! مجھ کو ہنر زندگی کا دے

رہبر جونپوری

صدق و صفات بخش تصور خودی کا دے
پرودگار! مجھ کو ہنر زندگی کا دے
سجدہ کروں تو دل میں چراغِ یقیں جلا
دستِ دعا اٹھے تو صلہ بندگی کا دے
عاجز ہوں تیرے رحم وکرم کا ہے آسرا
مجھ کو نواز ظرف و ضمیر آدمی کا دے
فکر و نظر کو میری عطا کر بلندیاں
دشتِ جنوں میں عزمِ سفر آگہی کا دے
مجھ کو دیا ہے تونے جو ذوقِ سخنوری
یا رب! شعور بھی تو مجھے شاعری کا دے