’’عصر حاضر کے نعت گو‘‘ تذکرہ نگار …گوہر ملسیانی

’’عصر حاضر کے نعت گو‘‘
تذکرہ نگار …گوہر ملسیانی

گوہر ملسیانی کسی تعارف کے محتاج نہیں آپ معروف نعت گو منفرد نثر نگار ہیں درس و تدریس کے پیشہ سے منسلک ہیں۔ آپ کے مجموعہ ہائے نعت’’مظہرِ نور‘‘۔’’متاعِ شوق‘‘شائع ہوچکے ہیں۔ آپ کا تذکرہ ’’عصر حاضر کے نعت گو‘‘ شائع ہوکر پذیرائی حاصل کرچکا ہے۔ گوہر ملسیانی ۱۹۸۳ء میں تذکرہ نگار کی حیثیت سے سامنے آئے اُن کی کتاب ’’ عصر حاضر کے نعت گو‘‘ کو گوہر پبلی کیشنز صادق آباد نے شائع کیا۔ ۲۷۲ صفحات پر مشتمل یہ کتاب تین حصّوں پر مشتمل ہے۔حصّہ اوّل میں مصنف نے ان موضوعات پر گفتگو کی ہے۔
۲۔نعت کے معنی۔ ۳۔ نعت کے اصطلاحی معنی۔۴۔ نعت کی تعریف ۔ ۵۔ نعت کی اہمیت ۔۶۔اصناف شاعری میں نعت کا مقام ۔۷۔ نعت ایک صنف سخن کی حیثیت سے۔ ۸۔عربی میں نعت ۔۹۔فارسی میں نعت ۔۱۰۔ اردو میں نعت ۔۱۱۔اردو نعت کی تدریجی ترقی۔
حصہ دوم میں عصر حاضرکے ۲۶ نعت گویان اردو کا تذکرہ کیا گیا ہے۔
حصہ سوم میں ۱۹ شعرائے کرام کا تذکرہ موجود ہے۔
آخر میں کتابیات کے عنوان سے ان کتابوں کی فہرست دی گئی ہے جن سے مصنف نے استفادہ کیا ہے۔ گوہر ملسیانی کا تذکرہ ’’عصر حاضر کے نعت گو‘‘ اردو نعتیہ ادب میں بیش بہا اضافہ ہے گوہر ملسیانی خوش نصیب ہیں کہ اللہ ربُّ العزّت نے اُن سے ایک بڑا کام لیا۔ ہم مصنف کے درجات کی بلندی کے لیے دعا گو ہیں۔
٭٭٭٭٭