علم نہیں مجھ کو تیری کیا تعریف لکھوں لفظ بہت کم ہیں

بقاؔ صدیقی (کراچی)

علم نہیں مجھ کو
تیری کیا تعریف لکھوں
لفظ بہت کم ہیں

اتنا سمجھا ہے
تم کو کیا کیا گنوائوں
سب کچھ رب کا ہے

تو ہی ہے ہر سو
تجھ سا کوئی اور نہیں
بانٹے جو خوشبو

مولا کی ہے شان
اس کو ہی اس کا ہے علم
پائے جو عرفان

اللہ ہے بے نقص
سارے نقص ہمیں میںہیں
ٹھہرے آدم زاد