ماہ سیما ہے اَحْمدِ نوری

ماہ سیما ہے اَحْمدِ نوری
مہر جلوہ ہے اَحْمدِ نوری
نور والا ہے اَحْمدِ نوری
نور والا ہے اَحْمدِ نوری
نہ کھلا کیا ہے اَحْمدِ نوری
راز بستہ ہے اَحْمدِ نوری
دُور پہنچا ہے اَحْمدِ نوری
بہت اُونچا ہے اَحْمدِ نوری
نور سینہ ہے اَحْمدِ نوری
طور سینہ ہے اَحْمدِ نوری
وَصف اَجْلٰی ہے اَحْمدِ نوری
کشفِ اَخفی ہے اَحْمدِ نوری
عہدِ اَوفی ہے اَحْمدِ نوری
شہدِ اَصفی ہے اَحْمدِ نوری
جلب تقویٰ ہے اَحْمدِ نوری
سلب طغویٰ ہے اَحْمدِ نوری
نجم سے ماہ مَہ سے مِہر ہوا
گھڑیوں     بڑھتا ہے اَحْمدِ نوری
مہر سے ماہ مَہ سے نجم ہوا
ابھی نیچا ہے اَحْمدِ نوری
اُس کے مُدرَک ہیں     فوقِ طبیعات
علم اَعلیٰ ہے اَحْمدِ نوری
برکاتی جہاں     جمی ہو برات
اس میں     دولہا ہے اَحْمدِ نوری
شمس دیں     کی شعاؤں     کا تیرے
سر پہ سہرا ہے اَحْمدِ نوری
تار اَنظار مرحمت سے بُنا
تیرا جامَہ ہے اَحْمدِ نوری
رُشد و اِرشاد کا ترے سر پر
آج طرہ ہے اَحْمدِ نوری
قادِریت ہے چشتیت سے بہم
نگ دوپلکا ہے اَحْمدِ نوری
رَفع قومہ میں     وَضع سجدے میں
لَا و اِلَّا ہے اَحْمدِ نوری
ذِکر ایسا کہ کلمہ کی اُونگلی
خود سراپا ہے اَحْمدِ نوری
قومہ سیدھا رکوع دوہرا ہے
اَلِف و اِلَّا ہے اَحْمدِ نوری
محض اِثبات کا مقامِ بلند
یوں     دکھاتا ہے اَحْمدِ نوری
میرا مرشد ہے مصحف ناطِق
نوری آیہ ہے اَحْمدِ نوری
مہبط فضل شیخ تا برکات
پنجسورہ ہے اَحْمدِ نوری
حرمین اس کے پیرو اعلی پیر
بیت اَقصیٰ ہے اَحْمدِ نوری
اِسم      اَسمٰی      ترا      تَعَا     َلیا     للّٰہ
بامُسَمّٰی ہے اَحْمدِ نوری
آسماں     سے اُترتے ہیں     اَسماء
نام کیسا ہے اَحْمدِ نوری
نام بھی نور حسن تام بھی نور
نور دُونا ہے اَحْمدِ نوری
نورِ سرکارِ ذات دُونا ہے
دن سوایا ہے اَحْمدِ نوری
کیجئے عکس مثل کہ ناشئہ کا
نورِ انشِا۱؎ ہے اَحْمدِ نوری
قرب اس اعلیٰ سے ہے تجھے جس کا
قَصْرِ   اَوْ    اَ دْنٰی    ہے    اَحْمدِ   نوری
لا ؤ لد رہتے ہیں     تمام اَبدال
فرد و تنہا ہے اَحْمدِ نوری
پسر و نَبَسَۂ و نبیرۂ نور
نور آیا ہے اَحْمدِ نوری
اس کی سی ماں     جہان میں     کس کی
ابن زَہرا ہے اَحْمدِ نوری
شکل دیکھو تو نور کی تصویر
نوری پتلا ہے اَحْمدِ نوری
نام پوچھو تو نور کی تنویر!
نور معنٰی ہے اَحْمدِ نوری
اَنجمن ہو رہی مشرقِ نور
جلوہ فرما ہے اَحْمدِ نوری
بام و دَر کی ضیا سے روشن ہے
نور بالا ہے اَحْمدِ نوری
طالبانِ حریمِ حق کے لیے
راست قبلہ ہے اَحْمدِ نوری
ڈَور گنڈے پہ چار عنصر کے
تیرا گنڈا ہے اَحْمدِ نوری
بند تعویذ سے کشائش نے
قول باندھا ہے اَحْمدِ نوری
نقشے جمتے ہیں     تیری ہمت سے
نقش پروَہ ہے اَحْمدِ نوری
اچھے پیارے کے دل کا ٹکڑا ہے
اچھا اچھا ہے اَحْمدِ نوری
بھولی صورت ہے نور کی مورت
پیارا پیارا ہے اَحْمدِ نوری
گلِ بغداد کی مہک میں     بسا
بھینا بھینا ہے اَحْمدِ نوری
ابر برکات کی ٹپک میں     دُھلا
اُوجلا اُوجلا ہے اَحْمدِ نوری
ہے مصفی عسل لبوں     سے رَواں
میٹھا میٹھا ہے اَحْمدِ نوری
وہ عوارِفؔ کا نور بار سراج
جگ اُوجالا ہے اَحْمدِ نوری
اس کے اِرشاد ہیں     دلیل یقین
شک مٹاتا ہے اَحْمدِ نوری
اس کے لب ہیں     کلید کشف قلوب
فتح دَولہا ہے اَحْمدِ نوری
گہر بے بہائے نورؔ و بہاؔ
تیرا شجرہ ہے اَحْمدِ نوری
سید       الانبیا       رسول         ا   للّٰہ
تیرا بابا ہے اَحْمدِ نوری
مرجع الاولیاء علی وَلی
تیرا دادا ہے اَحْمدِ نوری
وہ حسینی رَچی ہوئی رنگت
گل سے زَیبا ہے اَحْمدِ نوری
زِینت زَین عابدیں     سے ترا
حسن نکھرا ہے اَحْمدِ نوری
عم اَعظم ہیں     حضرتِ باقر
تو بھتیجا ہے اَحْمدِ نوری
صادِقؔ رَفض سوز کا پرتو!
تجھ پہ سچا ہے اَحْمدِ نوری
شانِ کاظمؔ دِکھا کہ َمعْدنِ علم
تیرا مَنْشا ہے اَحْمدِ نوری
اے رضاؔ کے رضی رضا کے رضاؔ
تجھ سے جویا ہے اَحْمدِ نوری
فیض معروفؔ سے ترا معروف
شہر شہرہ ہے اَحْمدِ نوری
سِر میں     ساری ہے سرّ پاک ترے
سِر پہ سارا ہے اَحْمدِ نوری
سَیِّدُؔ الطَّائفہ کا طائف ہے
ہم کو کعبہ ہے اَحْمدِ نوری
شبل شبلی قوم شرزا پر
شیر شرزہ ہے اَحْمدِ نوری
عبد واحد کے بحر وحدت سے
دُرِّ یکتا ہے اَحْمدِ نوری
بوالفرحؔ کے لئے فرح دیدے
غم نے گھیرا ہے اَحْمدِ نوری
حسنؔ بوالحسن پہ تیرا حسن
کیا نرالا ہے اَحْمدِ نوری
بوسعیدؔی سعید کتنا سعد
تیرا تارا ہے اَحْمدِ نوری
غوثِؔ کونین کی غلامی سے
جگت آقا ہے اَحْمدِ نوری
عبدؔ رَزَّاق ہیں     وَسیلۂ رِزْق
تو سہارا ہے اَحْمدِ نوری
نصر و بونصرؔ اس کے نصر نصیر
ناصر اپنا ہے اَحْمدِ نوری
تازی کوپل علیؔ کی ڈالی میں
تیرا بالا ہے اَحْمدِ نوری
شاہِؔ موسیٰ کے گورے ہاتھوں     کا
ید بیضا ہے اَحْمدِ نوری
حسنیؔ اَحْمدِی حسینؔ و حمید
خوش ستودہ ہے اَحْمدِ نوری
دیکھ لو جلوۂ بہائُؔ الدین
آئینہ سا ہے اَحْمدِ نوری
گل خندانِ باغِ ابراہیمؔ
تیرا چہرہ ہے اَحْمدِ نوری
خود بھکاریؔ کے دَر کا سائل ہے
ہم کو داتا ہے اَحْمدِ نوری
نورِ قاضی ضیائؔ کے پرتو سے
نورِ اَضوا ہے اَحْمدِ نوری
اے جمالِ جمیل شانِ جمالؔ
تجھ میں     جملہ ہے اَحْمدِ نوری
حمد کے دونوں     پاک ناموں     کا
فیض و لمعہ ہے اَحْمدِ نوری
شانِ     اَنوارِ    فضل    فضلؔ     ا   للّٰہ
تجھ سے پیدا ہے اَحْمدِ نوری
برکاتی چمن کا بوٹا ہے
برکت زا ہے اَحْمدِ نوری
باغِ آلِ محمدی ہے نہال
ستھرا پودا ہے اَحْمدِ نوری
رہے حمزہؔ کا میکدہ جس کی
مَدھ کا ماتا ہے اَحْمدِ نوری
آلِ اَحْمد ہیں     مصطفی کے چاند
ماہِ پیارا ہے اَحْمدِ نوری
خسرو اَولیا ہیں     آلِ رسول
شاہزادہ ہے اَحْمدِ نوری
میرے آقا کا لاڈلا بیٹا
نازوں     پالا ہے اَحْمدِ نوری
شب بدعت سے کہئے ہو کافور
نور اَفزا ہے اَحْمدِ نوری
رفض و تفضیل و ندوہ کا قاتل
سنت آرا ہے اَحْمدِ نوری
سیدھا سادھا ہے لیکن اُلٹوں     سے
بانکا ترچھا ہے اَحْمدِ نوری
دیکھے بھالے ہیں     شہر دَہر کے شیخ
سب سے اَولیٰ ہے اَحْمدِ نوری
خلفائے ثَلٰثَہ کا ہے غلام
جب تو مولیٰ ہے اَحْمدِ نوری
ذائقہ ان کا تا زَباں     ہی نہیں
دل سے شیدا ہے اَحْمدِ نوری
بے تقیہ بنا کریں     عیار
مرگِ شیعہ ہے اَحْمدِ نوری
بے محاسن ہیں     پیر چوٹی کے
مرد حق کا ہے اَحْمدِ نوری
یاں     نہیں     کفر پہ چمر توحید
خاص بندہ ہے اَحْمدِ نوری
کھو کے سدھ بدھ بنے سنیچر پیر
حق کا جمعہ ہے اَحْمدِ نوری
بدمَذاقوں     کو تیرا شہد ہے تلخ
ان کو صفرا ہے اَحْمدِ نوری
جلتے ہیں     تیرے گرم چرچے سے
اُن کو سودا ہے اَحْمدِ نوری
اے علم تعزیوں     کے مجرے سے دُور
تجھ کو مجرا ہے اَحْمدِ نوری
شبِ باطل کا اب سویرا ہے
حق کا تڑکا ہے اَحْمدِ نوری
ظلمتِ غم تو اور مجھ کو دیا ہے
میرا ماوا ہے اَحْمدِ نوری
تیری رحمت پہ تیری نعمت پر
میرا دعویٰ ہے اَحْمدِ نوری
جس کا میں     خانہ زاد اُس کا تو
پیارا بیٹا ہے اَحْمدِ نوری
میرے آقا کا تجھ پہ اور تیرا
مجھ پہ سایہ ہے اَحْمدِ نوری
تیرہ بختی نے کر دیا اَندھیر
دیر اب کیا ہے اَحْمدِ نوری
نورِ اَحْمدِ مجھے بھی چمکا دے
نام تیرا ہے اَحْمدِ نوری
لاکھ اپنا بنائیں     غیر اُوسے
پھر ہمارا ہے اَحْمدِ نوری
دودھ کا دودھ پانی کا پانی
کرنے والا ہے اَحْمدِ نوری
وِرَد کھو دے کہ خواہشوں     نے بہت
دل دُکھایا ہے اَحْمدِ نوری
تو ہنسا دے کہ نفس بد نے ستم
خوں     رولایا ہے اَحْمدِ نوری
خاک ہم نے اُڑائی یوہیں     سہی
تو تو دریا ہے اَحْمدِ نوری
خاندانی کرم قدیمی جود
تیرا حصہ ہے اَحْمدِ نوری
پوتڑوں     کا کریم اِبن کریم
کرم آما ہے اَحْمدِ نوری
میرے حق میں     مخالفوں     کی نہ سن
حق یہ میرا ہے اَحْمدِ نوری
اِتنا کہدے رضاؔ ہمارا ہے
پار بیڑا ہے اَحْمدِ نوری
ہیں     رضاؔ کیوں     ملول ہوتے ہو
ہاں     تمہارا ہے اَحْمدِ نوری
٭٭٭٭
حضرت ابوہریرہ     رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عنہ کی تھیلی
    حضرت ابوہریرہ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عنہ کا بیان ہے کہ میں     حضورِ اقدس صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَسَلَّم کی خدمتِ اقدس میں     کچھ کھجوریں     لے کر حاضر ہوا اور عرض کیا کہ یا رسول اﷲ! ان کھجوروں     میں     برکت کی دعا فرما دیجئے۔ آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَسَلَّمنے ان کھجوروں     کو اکٹھا کرکے دُعاءِ برکت فرما دی اور ارشاد فرمایا کہ تم ان کو اپنے توشہ دان میں     رکھ لو اور تم جب چاہو ہاتھ ڈال کر اس میں     سے نکالتے رہو لیکن کبھی توشہ دان جھاڑ کر بالکل خالی نہ کر دینا۔ چنانچہ حضرت ابوہریرہ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عنہتیس برس تک ان کھجوروں     کو کھاتے اور کھلاتے رہے بلکہ کئی من اس میں     سے خیرات بھی کر چکے مگر وہ ختم نہ ہوئیں    ۔
(سنن الترمذی،کتاب المناقب،باب مناقب ابی ھریرۃ،الحدیث:۳۸۶۵، ج۵،ص۴۵۴)