مرے دل میں ہوئی جب بھی کوئی خواہش مولا ہوگئی تیری عنایات کی بارش مولا

فریدتنویرؔ

مرے دل میں ہوئی جب بھی کوئی خواہش مولا
ہوگئی تیری عنایات کی بارش مولا

تیرے خورشید کرم کی یہ ضیا باری ہے
زندگی میں ہے اجالوں کی نمائش مولا

نکلا طوفان حوادث سے سفینہ میرا
یہ ترا فضل ہے یہ تیری نوازش مولا

ہو مرے حال پہ ہر وقت ترا لطف و کرم
دور ہر دم رہے افلاک کی گردش مولا

التجا ہے ترے تنویرؔ کی اے رب کریم
زندگی بھر نہ ہو اس سے کوئی لغزش مولا