نماز صبح پڑھ کر ہو گئی چلنے کی تیاری

مجاہدین اسلام جہاد کے رستے پر

نماز صبح پڑھ کر ہو گئی
چلنے کی تیاری
اٹھا خود مسجد نبوی سے ابر
رحمت باری
دکھانا شان حق منظور تھی
ہادی کامل کو
مدینے سے نکل کر روکنا
تھا فوج باطل کو
دوم تھا سال ہجری بارھویں
تھی ماہ رمضاں کی
کہ نکلی مختصر سی اک
جماعت اہل ایماں کی
نکل کر شہر سے تعداد دیکھی
جانثاروں کی
تو گنتی تین سو تیرہ تھی
ان طاعت گذاروں کی
سلاح جنگ یہ تھا آٹھ
تلواریں تھیں چھ زرہیں
غناء کا رنگ یہ تھا چیتھڑوں
میں بیسیوں گرہیں
کمانیں اور نیزے ،
چوبہائے نا تراشیدہ
حدود کفش سے آزاد پائے آبلہ
دیدہ
زیادہ لوگ پیدل تھے سواری
پر بہت تھوڑے
کہ ستر اونٹ تھے بہر
سواری اور دو گھوڑے
ہلا دیتی تھی کہساروں
کو جن کی دھاک پیدل تھے
جناب حمزہ کیا خود صاحب
لو لاک پیدل تھے
علیؓ اور بولبابہ اور
جناب سید عالمؐ
یہ تینوں باری باری سے شریک
ناقہ تھے باہم
ابو بکرؓ و عمرؓ اور
عبد رحمٰنؓ اک سواری پر
منازل طے کئے جاتے تھے اپنی
اپنی باری پر
سمندر میں اٹھا کرتی ہے
جیسے موج بے پروا
اسی صورت رواں تھی غازیوں
کی فوج بے پروا
کھجوریں تک میسر تھیں
نہ جن کے پیٹ بھرنے کو
یہ اللہ کے مجاہد تھے چلے
تھے جنگ کرنے کو
بہت سے سر بسر محروم
گھوڑے سے اور ناقے سے
بہت ایسے تھے جن کی رات
بھی کٹتی تھی فاقے سے
خیال عظمت ملت مکیں تھا
ان کے سینوں میں
کوئی ساماں نہ تھا ذوق یقیں
تھا ان کے سینوں میں
یہ چند افراد اٹھے تھے ضعیفوں
کی حمایت کو
شریروں کے مقابل میں شریفوں
کی حمایت کو
چلے تھے یہ مجاہد آج میدان
شہادت میں
محمدؐ کی ہدایت پر محمدؐ
کی قیادت پر