نہیں خلق ہی میں یہ غلغلہ، تری شان جلَّ جلالہٗ

امیر مینائی

نہیں خلق ہی میں یہ غلغلہ، تری شان جلَّ جلالہٗ
سرِ عرش بھی ہے لکھا ہوا تری شان جلَّ جلالہٗ

تری ذات مالکِ کن فکاں، تری ذات خالقِ انس و جاں
ترے در کے شاہ بھی ہیں گدا، تری شان جلَّ جلالہٗ

ترا نامِ پاک دوائے دل، ترا ذکرِ پاک غذائے دل
ترا شکر کس سے ہوا ادا، تری شان جلَّ جلالہٗ

ہے کریم تو، ہے رحیم تو، ہے علیم تو، ہے قدیم تو
ہے محال حصر صفات کا، تری شان جلَّ جلالہٗ

ہے زمانے بھر پہ کرم ترا، بھرے کیوں زمانہ نہ دم ترا
درِ فیض خلق پہ ہے کھلا، تری شان جلَّ جلالہٗ

مرے دل کو صبر و قرار دے، مرے بگڑے کام سنوار دے
مجھے ہے ترا ہی اک آسرا، تری شان جلَّ جلالہٗ

ہے ’’امیر‘‘ اس میں بھی اک مزا کہ شہود و غیب ہے ایک جا
ہے عجیب جملہ ردیف کا، تری شان جلَّ جلالہٗ