پیشانی پر نشاں اسی کا سرمایۂ جسم و جاں اسی کا

فصیح اکملؔ قادری

پیشانی پر نشاں اسی کا
سرمایۂ جسم و جاں اسی کا

سجدوں پہ برکت اسی کی
ہستی پہ سائباں اسی کا

ہر لفظ میں تسبیح اس کی
ہر حرفِ مہرباں اسی کا

ہر گل میں مہک اسی کی
ہر برگ نغمہ خواں اسی کا
سب نافہ ہائے جاں اسی کے
سب قصہ در جہاں اسی کا

ہر صورت میں اسی کا جادو
ہر نطق کلمہ خواں اسی کا

سب چہرے آیتیں اسی کی
ہنر کوزہ گراں اسی کا

تحریک میں حرکت اسی کی
سارا زماں مکاں اسی کا

اشعار میں اسی کی مدحت
الفاظ کا کارواں اسی کا

آنکھوں میں روشنی اسی کی
ہر خواب مہرباں اسی کا

امواج بحر بھی اسی کی
کشتی کا بادباں اسی کا

سبزے کی چادریں اسی کی
ہر تختۂ گلستاں اسی کا

ہر رنگ میں اسی کا جلوہ
ہر جلوہ اک جہاں اسی کا

پابند اسی کی ساعتیں بھی
ہر لمحۂ اذاں اسی کا

سب روز و ماہ و سال اسی کے
ہر لمحۂ جواں اسی کا

منقارِ رزق بھی اسی کی
ہر شاخ آشیاں اسی کا

اک حرف کن بھی اسی کا
یہ کارِ دوجہاں اسی کا

الحمد ہے اسی کو زیبا
یہ سب زمیں آسماں اسی کا