پیش آئینہ بھی تو ہے، آئینہ خانہ بھی تو دیدۂ حیراں بھی تو ہے روئے جانانہ بھی تو

صوفی صادق دہلوی

پیش آئینہ بھی تو ہے، آئینہ خانہ بھی تو
دیدۂ حیراں بھی تو ہے روئے جانانہ بھی تو
عشق بھی تو ہے فروغِ حسنِ جانانہ بھی تو
تو ہی شمع بزم بھی ہے، ذوقِ پروانہ بھی تو
بادۂ عرفاں بھی تو ہے، جام و پیمانہ بھی تو
جذبۂ رنداں بھی تو ہے، پیر میخانہ بھی تو
خانۂ دل میں جو دیکھا تجھ کو اے پردہ نشیں
تو ہی خود مہمان بھی ہے، صاحبِ خانہ بھی تو
میرا سوزِ دل بھی تو ہے، تو ہی میرا دل بھی ہے
میرا کاشانہ بھی تو ہے حسنِ کاشانہ بھی تو
مونس و غمخوار ہو کر ہے بظاہر بے نیاز
تو یگانہ بھی ہے سب کا سب سے بیگانہ بھی تو
میری آنکھوں سے کوئی دیکھے تو پہچانے تجھے
کاسۂ سائل بھی تو دستِ کریمانہ بھی تو
تیری راہوں سے گزر کر مجھ پہ یہ عقدہ کھلا
شوکت کعبہ بھی تو ہے شانِ بت خانہ بھی تو
تو ہی فصلِ گل بھی ہے، تو ہی خزگاں کا دور بھی
سبزہ و گلشن بھی تو ہے، دشت و ویرانہ بھی تو
چشمِ صادقؔ نے تجھے دیکھا ہے اپنے آپ میں
لاکھ پردوں میں بھی تو ہے، بے حجانہ بھی تو