کروں میں یاد تجھ کو ذہن و دل کو یک زباں کردے قیامت تک رہے جو یاد وہ حسنِ بیاں کردے

حیرت الہ آبادی

کروں میں یاد تجھ کو ذہن و دل کو یک زباں کردے
قیامت تک رہے جو یاد وہ حسنِ بیاں کردے

تو اعلیٰ ہے تو افضل ہے تو مالک ہے تو خالق ہے
تو ہی تو ہے تو پھر دعوائے باطل رائیگاں کردے

تجھے ڈھونڈوں تجھے پوجوں تجھے دیکھوں تجھے چاہوں
مری چشمِ تمنا کو الٰہی ضوفشاں کردے

ستاروں کی طرح چمکے ہمیشہ میری پیشانی
جبینِ شوق پر ایسا عبادت کا نشاں کردے

نگاہِ شوق کو ہر سمت جلوے ہی نظر آئیں
تمنائے مذاقِ دید کو یارب جواں کردے

بسے تیری محبت روح میں دل میں نگاہوں میں
ہمارے شہر دل کو تو محبت کا جہاں کردے

یہ تیرا عبد ہے مالک تو ہی معبود ہے اس کا
پسِ آئینہ جو کچھ ہے وہ حیرتؔ پر عیاں کردے