کہکشاں چاند سورج ستاروں میں تو سبزپتوں میں پھولوں میں خاروں میں تو

افضل علی حیدری

کہکشاں چاند سورج ستاروں میں تو
سبزپتوں میں پھولوں میں خاروں میں تو
کوہ میں دشت میں آبشاروں میں تو
باغ ہستی کے رنگیں نظاروں میں تو
تیرے جلوے ہیں بکھرے ہوئے چارسو
اللہ ھو اللہ ھو اللہ ھو اللہ ھو

تیرا ہی ذکر ہے انجمن انجمن
ترا کلمہ تری بات تیرا سخن
نور ہی نور تیرا چمن در چمن
موگرا یا سمن نرگس و نسترن
کہہ رہے ہیں یہ شبنم سے کرکے وضو
اللہ ھو اللہ ھو اللہ ھو اللہ ھو

کتنی اونچائی پر تیرا دربار ہے
خوب سے خوب تر تیری سرکار ہے
کوئی کیا جانے کیا تیرا اسرار ہے
سارے عالم کا تو ہی تو مختار ہے
گونجتی ہے تری ہی صدا چار سو
اللہ ھو اللہ ھو اللہ ھو اللہ ھو

اہل دیر و حرم دیکھتے رہ گئے
پتھروں کے صنم دیکھتے رہ گئے
تیرا جاہ و حشم دیکھتے رہ گئے
تیری شان کرم دیکھے رہ گئے
تونے سب کا بھرا دامن آرزو
اللہ ھو اللہ ھو اللہ ھو اللہ ھو

تیرا بندہ ہوں تیرا گنہگار ہوں
زخم سے چور ہوں غم سے لاچار ہوں
گردشوں میں جہاں کی گرفتار ہوں
تیری چشمِ کرم کا طلب گار ہوں
حشر میں رکھنا افضلؔ کی تو آبرو
اللہ ھو اللہ ھو اللہ ھو اللہ ھو