کیتا ہوں ترے نانوں کو میں ورد زباں کا کیتا ہوں ترے شکر کو عنوان بیاں کا

ولیؔ دکنی

کیتا ہوں ترے نانوں کو میں ورد زباں کا
کیتا ہوں ترے شکر کو عنوان بیاں کا

جس گرد اُپر پانوں رکھیں تیرے رسولاں
اس گرد کو میں کحل کروں دیدۂ جاں کا

کیتا ہے ولیؔ دل ستی یوں مصرعِ رنگیں
ہے یاد تری مجھ کوں سبب راحتِ جاں کا