یارب مرے بچے کو سرکار ﷺ کا سایہ دے چاندی کا بھی چمچہ دے سونے کا کٹورا دے

سہیلؔ غازی پوری

یارب مرے بچے کو سرکار ﷺ کا سایہ دے
چاندی کا بھی چمچہ دے سونے کا کٹورا دے

ہر عید میں چل جائے اور ختم نہ ہو یارب
کشکول قناعت میں اک ایسا ہی سکّہ دے

کیا کس کی ضرورت ہے معلوم ہے مولا کو
ہم لوگ تو کہتے ہیں دے سب سب سے زیادہ دے

اس ربِّ دو عالم کا یہ بھی تو کرم دیکھو
ہم ٹھاٹ سے رہتے ہیں جیسے کہ ہوں شہزادے

طاہر سے خدا والے پیدا ہوں یہاں یارب
اس پاک زمیں کو بھی اک شہر اٹاوہ دے

بولو تو سہیلؔ اس نے کب وعدہ خلافی کی
ایفا ہی کئے اس نے جتنے بھی کئے وعدے