یہ زمیں آسماں ترے صدقے میں ہی کیا دو جہاں ترے صدقے

شکیل

یہ زمیں آسماں ترے صدقے
میں ہی کیا دو جہاں ترے صدقے
ہر نفس ہر خیال تجھ پہ نثار
ہر نظر ہر زباں ترے صدقے
خلوتِ حسن شش جہت کی قسم
بزمِ کون و مکاں ترے صدقے
ہے قیامت کا انتظار ہنوز
دل کی بیتابیاں ترے صدقے
نقش ہے لوحِ دل پہ تیرا کلام
رحمتِ جاوداں ترے صدقے
حور و جن وملک کو کیا کہئے
ابن آدم کی جاں ترے صدقے
رنگ و بو میں الجھ سکا نہ شکیلؔ
جلوۂ لامکاں ترے صدقے